2014/10/28

ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺫﺍﮐﺮ ﻧﺎﺋﮏ ﻋﺮﺑﯽﺍﻭﺭ ﺑﺮﺝ ﺧﻠﯿﻔﮧ

0 تبصرے
ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺫﺍﮐﺮ ﻧﺎﺋﮏ ﻋﺮﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺝ ﺧﻠﯿﻔﮧ .
ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻘﺮﯾﺮ " ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﮯﺣﻘﻮﻕ " ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺟﮕﮧ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮞ
ﺴﻮﺭﮦ ﻧﺴﺎﺀ ﺳﻮﺭۃ 4ﺁﯾﺖ 34 ﻣﯿﮟ ﮨﮯﮐﮧ
ﺗﺮﺟﻤﮧ :ﻣﺮﺩ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﭘﮧ ﻣﺴﻠﻂ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﮐﻢ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﮧﺧﺪﺍ ﻧﮯ ﺑﻌﺾ ﮐﻮ ﺑﻌﺾ ﺳﮯ ﺍﻓﻀﻞ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﮯ ۔۔۔۔۔
"ﻟﻮﮒ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻟﻔﻆ ﻗﻮﺍﻡ ﮐﮯﻣﻌﻨﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﺟﮧ ﺍﻭﭘﺮﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﻟﻔﻆ ﻗﻮﺍﻡ ﺍﻗﺎﻣۃ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ ﮨﮯﺍﻗﺎﻣۃ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺁﭖ ﻧﻤﺎﺯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻗﺎﻣﺖﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﮩﺬﺍ ﺍﻗﺎﻣۃ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﮩﺬﺍ ﻟﻔﻆ ﺍﻗﺎﻣۃ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﺟﮧ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻧﭽﺎ ﮨﮯ ﻧﮧ ﮐﮧ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻣﯿﮟ "
۔ﺧﻄﺒﺎﺕ ﺫﺍﮐﺮ ﻧﺎﺋﮏ ﭘﺎﺭﭦ 1 ﺻﻔﺤﮧ249-250
ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﯽ ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﻗﺎﺑﻠﯿﺖ ﺩﯾﮑﮭﺌﮯ ﮐﮧ ﻟﻔﻆ ﻗﻮﺍﻡ ﮐﺎ ﻣﺎﺩﮦ ﺍﻗﺎﻣۃ ﺑﺘﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺣﺎﻻﮞ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﺩﺭﺟﮧﺩﻭﻡ ﮐﮯ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﻗﻮﺍﻡ ﮐﺲ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ ﮨﮯﺗﻮ ﻭﮦ ﺑﻐﯿﺮ ﭨﺎﺋﻢ ﻟﺌﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻓﻮﺭﺍ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﮕﺎ ﮐﮧ ﻗﻮﺍﻣﮧ ﺳﮯ۔ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﻟﻔﻘﮧ ﮐﻮ ﯾﮧ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯﺍﺳﯽ ﺗﻘﺮﯾﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﮕﮧ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ :
"ﺍﺳﻼﻡ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﻭﭦ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﺳﻮﺭﮦﻣﻤﺘﺤﻨﮧ ﺳﻮﺭﺕ ﻧﻤﺒﺮ 60 ﺁﯾﺖ ﻧﻤﺒﺮ 12 ﭘﮍﮬﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ
ﺗﺮﺟﻤﮧ : ﺍﺋﮯ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ! ﺟﺐ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﻣﻮﻣﻦ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺍﺱﺑﺎﺕ ﭘﮧ ﺑﯿﻌﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﺁﺋﯿﮟ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮧ ﺗﻮ ﺷﺮﮎ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ ﻧﮧ ﭼﻮﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ ﻧﮧ ﺑﺪﮐﺎﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ.
 ﯾﮩﺎﮞ ﻋﺮﺑﯽ ﮐﺎ ﻟﻔﻆ ﺑﯿﺎﻥ ‏(ﯾﺒﺎﯾﻌﻨﮏ ‏)ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﺍﻭﺭﺑﯿﺎﻥ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﺨﺎﺑﺎﺕ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦﺟﺪﯾﺪﯾﺖ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﮨﮯ ۔۔۔۔
ﺧﻄﺒﺎﺕ ﺫﺍﮐﺮ ﻧﺎﺋﮏ ﭘﺎﺭﭦ 1ﺻﻔﺤﮧ  312 
ﯾﮩﺎﮞ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﯾﺒﺎﯾﻌﻨﮏ ﮐﺎ ﻣﺎﺩﮦ ﺑﯿﺎﻥ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮨﮯﺟﺒﮑﮧ ﯾﺒﺎﯾﻌﻨﮏ ﺑﯿﺎﻥ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺎﺏ ﻣﻔﺎﻋﻠﮧ ﻣﺒﺎﯾﻌﮧ ﺳﮯﻓﻌﻞ ﻣﻀﺎﺭﻉ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﺎﺩﮦ ﺑﯿﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺏ۔ﯼ۔ﻉ ﮨﮯ۔ ﺟﺐﺍﻧﮑﮯ ﻓﺎﺅﻧﮉﯾﺸﻦ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺣﺎﻝ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﻼﻡﮐﮯ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﻭﻭﭦ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺳﮯ ﺟﻮ ﺑﺮﺝﺧﻠﯿﻔﮧ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﮐﺎ ﺁﭖ ﺧﻮﺩ ﮨﯽﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻟﮕﺎ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ.

0 تبصرے:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔