2015/07/28

امام ابو حنیفہ

0 تبصرے

ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﮐﺎﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ
ﻧﻤﺎﺯﭘﮍﮬﻨﮯ ﭘﮧ ﺍﻋﺘﺮﺍﺽ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ
ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﮐﺎﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ
ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﺎ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺣﻨﺎﻑ
ﭘﮧ ﺍﻋﺘﺮﺍﺽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺣﻨﺎﻑ ﻧﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐؒ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ
ﻣﯿﮟ ﻏُﻠﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﯽ
ﻃﺮﺡ ﺩﮬﻮﮐﮧ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺻﺮﻑ ﺍﺣﻨﺎﻑ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺳﮑﻮ
ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻓﻌﯽ،ﺣﻨﺒﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻟﮑﯽ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺑﮭﯽ
ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ 8 ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﭘﯿﺶِ ﺧﺪﻣﺖ ﮨﯿﮟ
ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮐﻮ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﻣﺎﻡ ﻧﻮﻭﯼ ﺷﺎﻓﻌﯽ ؒﻧﮯ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺍﻻﺳﻤﺎﺀ ﺻﻔﺤﮧ 704
ﭘﮧ،ﻋﻼﻣﮧ ﺩﻣﯿﺮﯼؒ ﻧﮯ ﺣﯿﺎﺕ ﺍﻟﺤﯿﻮﺍﻥ ﺟﻠﺪ 1 ﺻﻔﺤﮧ 122
ﭘﮧ،ﺣﺎﻓﻆ ﺍﺑﻦ ﺣﺠﺮ ﻋﺴﻘﻼﻧﯽ ﺷﺎﻓﻌﯽؒ ﻧﮯ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺍﻟﺘﮩﺬﯾﺐ
ﺟﻠﺪ 10 ﺻﻔﺤﮧ 450 ﭘﮧ،ﻋﻼﻣﮧ ﺟﻼﻝ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺳﯿﻮﻃﯽؒ ﻧﮯ
ﺗﺒﯿﺾ ﺍﻟﺼﺤﯿﻔﮧ ﺻﻔﺤﮧ 15 ﭘﮧ،ﻗﺎﺿﯽ ﺣﺴﯿﻦ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ
ﺩﯾﺎﺭ ﻣﺎﻟﮑﯽؒ ﻧﮯ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺍﻟﺨﻤﯿﺲ ﺟﻠﺪ 2 ﺻﻔﺤﮧ 366 ﭘﮧ،ﻋﺒﺪ
ﺍﻟﻮﮨﺎﺏ ﺷﻌﺮﺍﻧﯽ ﺣﻨﺒﻠﯽؒ ﻧﮯ ﮐﺘﺎﺏ ﺍﻟﻤﯿﺰﺍﻥ ﺟﻠﺪ 1 ﺻﻔﺤﮧ 61
ﭘﮧ،ﺍﺑﻦ ﺣﺠﺮ ﻣﮑﯽ ﺷﺎﻓﻌﯽؒ ﻧﮯ ﺍﻟﺨﯿﺮﺍﺕ ﺍﻟﺤﺴﺎﻥ ﺻﻔﺤﮧ 36
ﭘﮧ ﺍﻣﺎﻡ ﺻﺎﺣﺐؒ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﯿﺎ ﮨﮯﮐﮧ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ
ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﻧﮯ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ
ﭘﮍﮬﯽ۔
ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﺳﮯ ﮨﯽ
ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﮐﺌﯽ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻭﻗﻮﻉ ﮨﻮﺍ ﺟﻮ ﮐﮧ
ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ۔
ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺣﻨﺒﻠﯽؒ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﭼﺎﻟﯿﺲ
ﺗﺎﺑﻌﯿﻦ ﺳﮯ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﻣﻨﻘﻮﻝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭼﺎﻟﯿﺲ
ﺳﺎﻝ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﯽ
ﺳﻨﺪ ﺻﺤﯿﺢ ﮨﮯ۔ ‏(ﻏﻨﯿۃ ﺍﻟﻄﺎﻟﺒﯿﻦ، ﺻﻔﺤﮧ 496 ﺑﺘﺤﻘﯿﻖ
ﻣﺒﺸﺮ ﻻﮨﻮﺭﯼ ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪ ‏)
ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ ﺍﻥ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﻋﻠﻤﺎﺀ
ﭘﮧ ﻓﺘﻮﯼ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻏُﻠﻮ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻭﺭ
ﻟﮕﺎﺋﯿﮟ ﺍﻥ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﭘﮧ ﻓﺘﻮﯼ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﮐﯽ
ﻃﺮﺡ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺳﺎﻝ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ
ﭘﮍﮬﻨﮯ ﭘﮧ۔
ﮐﯿﺎ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪ ﺍﻟﻘﺎﺩﺭ ﺟﯿﻼﻧﯽؒ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ
ﮐﺎ ﻋﺸﺎﺀ ﮐﮯ ﻭﺿﻮ ﺳﮯ ﻓﺠﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﺎ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺑﯿﺎﻥ
ﮐﺮ ﮐﮯ ﻏُﻠﻮ ﮐﯿﺎ؟ ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪ ﻋﺎﻟﻢ ﻧﮯ ﺷﯿﺦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻘﺎﺩﺭ
ﺟﯿﻼﻧﯽؒ ﭘﮧ ﻓﺘﻮﯼ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺎﯾﺎ؟
ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺣﻨﺒﻠﯽ، ﻣﺎﻟﮑﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﻓﻌﯽ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺍﻭﺭ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ
ﺑﮭﯽ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻏُﻠﻮ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﻏﯿﺮ ﻣﻘﻠﺪﻭ ! ﺁﻭ، ﮨﻤﺖ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺍﮐﺎﺑﺮﯾﻦ ﭘﮧ ﻭﮨﯽ ﻓﺘﻮﯼ
ﻟﮕﺎﻭ ﺟﻮ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻮ ﺣﻨﯿﻔﮧؒ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﻠﺪﯾﻦ ﺍﺣﻨﺎﻑ ﭘﮧ ﻟﮕﺎﺗﮯ
ﮨﻮ

0 تبصرے:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔